Nasheed: Hurmat-e-Rasool (sallallahu alayhi wassallam) – Ya Sab ke Zimmadaree Hai

Based upon the Nazm by Hesham Syed, a brother has made a Nasheed and shared with ZHE team. We ask Allah (Azza wal Jall) to reward the brother. Insha’Allah, and accept of his efforts. Ameen.

Theme 1 – If the video doesn’t play, click here

Theme 2 – If the video doesn’t play, click here

Hurmat-e-Rasool (sallallahu alayhi wassallam) Ya Sab ke Zimmadaree Hai

Advertisements

A Response to Kuffar, Hypocrites, Yousuf Kazzab cult and Zaid Hamid supporters

This is a response to the Kuffar, the cult of nationalists, Yousuf Kazzab and Zaid Hamid along with his supporters.
Know us very well.
We bow down to Allah Alone and we don’t bow down to ANY Taghut (Falsehood).
If the video doesn’t play, click here

کفار منافقین اور یوسف کذاب کے پجاریوں اور زید حامد کے حمایتیوں کو ایک جواب

کہیں بھی ظلم کی تلوار سے ہرگز نہیں ڈرتے
کسی طاغوت کی چوکھٹ پہ اپنے سرنہیں جھکتے

محمد(صلی اللہ علیہ وسلم )کی غلامی کا گلے میں طوق پہنا ہے
قل ھو اللہ احداب چڑھ کر سولی پر بھی کہنا ہے

محمد(صلی اللہ علیہ وسلم )کی غلامی کا گلے میں طوق پہنا ہے
قل ھو اللہ احداب چڑھ کر سولی پر بھی کہنا ہے
قل ھو اللہ احداب چڑھ کر سولی پر بھی کہنا ہے

کہیں بھی ظلم کی تلوار سے ہرگز نہیں ڈرتے
کسی طاغوت کی چوکھٹ پہ اپنے سرنہیں جھکتے

ہم ہی للکار ِ قاسم ہیں ہم ہی شمشیر ِ حیدر ہیں
ہم ہی دشمن کے سینے میں گھپا ایک تیز خنجر ہیں

ہم ہی للکار ِ قاسم ہیں ہم ہی شمشیر ِ حیدر ہیں
ہم ہی دشمن کے سینے میں گھپا ایک تیز خنجر ہیں
ہم ہی دشمن کے سینے میں گھپا ایک تیز خنجر ہیں

کہیں بھی ظلم کی تلوار سے ہرگز نہیں ڈرتے
کسی طاغوت کی چوکھٹ پہ اپنے سرنہیں جھکتے

جلادی ہم نے ساحل پر ہی اپنی کشتیاں ساری
کہ یہ سب کچھ نہیں اِس راہ میں ہو جان بھی واری

جلادی ہم نے ساحل پر ہی اپنی کشتیاں ساری
کہ یہ سب کچھ نہیں اِس راہ میں ہو جان بھی واری
کہ یہ سب کچھ نہیں اِس راہ میں ہو جان بھی واری

کہیں بھی ظلم کی تلوار سے ہرگز نہیں ڈرتے
کسی طاغوت کی چوکھٹ پہ اپنے سرنہیں جھکتے

زبان اگلے گی حق کی بات ہی چاہے کہ وہ کٹ جائے
یہاں تک کہ عدوِ دین خود رستے سے ہٹ جائے

زبان اگلے گی حق کی بات ہی چاہے کہ وہ کٹ جائے
یہاں تک کہ عدوِ دین خود رستے سے ہٹ جائے
یہاں تک کہ عدوِ دین خود رستے سے ہٹ جائے

کہیں بھی ظلم کی تلوار سے ہرگز نہیں ڈرتے
کسی طاغوت کی چوکھٹ پہ اپنے سرنہیں جھکتے

کہ سینے صورتِ فولاد ڈٹ جاتے ہیں میداں میں
خدا کہتا ہے خود بنیانِ مرصوص ان کو قرآن میں

کہ سینے صورتِ فولاد ڈٹ جاتے ہیں میداں میں
خدا کہتا ہے خود بنیانِ مرصوص ان کو قرآن میں
خدا کہتا ہے خود بنیانِ مرصوص ان کو قرآن میں

کہیں بھی ظلم کی تلوار سے ہرگز نہیں ڈرتے
کسی طاغوت کی چوکھٹ پہ اپنے سرنہیں جھکتے

ہزاروں بندھ باندھوہم وہ طوفان جو نہیں تھمتے
طلب منزل کی سچی ہوتو رستے میں نہیں جمتے

ہزاروں بندھ باندھوہم وہ طوفان جو نہیں تھمتے
طلب منزل کی سچی ہوتو رستے میں نہیں جمتے
طلب منزل کی سچی ہوتو رستے میں نہیں جمتے

کہیں بھی ظلم کی تلوار سے ہرگز نہیں ڈرتے
کسی طاغوت کی چوکھٹ پہ اپنے سرنہیں جھکتے

بھروسہ ہے ہمیں اللہ کی تائید ونصرت پر
غلامان ِ محمد تو ہتھیلی پر لئے ہیں سر

بھروسہ ہے ہمیں اللہ کی تائید ونصرت پر
غلامان ِ محمد تو ہتھیلی پر لئے ہیں سر
غلامان ِ محمد تو ہتھیلی پر لئے ہیں سر

کہیں بھی ظلم کی تلوار سے ہرگز نہیں ڈرتے
کسی طاغوت کی چوکھٹ پہ اپنے سرنہیں جھکتے

ہمیں دنیا سے کیا مطلب ہم اس سے کچھ نہ لیتے ہیں
کہ ہم جنت کے بدلے میں اپنی جان کو بیچ دیتے ہیں

ہمیں دنیا سے کیا مطلب ہم اس سے کچھ نہ لیتے ہیں
کہ ہم جنت کے بدلے میں اپنی جان کو بیچ دیتے ہیں
کہ ہم جنت کے بدلے میں اپنی جان کو بیچ دیتے ہیں

کہیں بھی ظلم کی تلوار سے ہرگز نہیں ڈرتے
کسی طاغوت کی چوکھٹ پہ اپنے سرنہیں جھکتے

عدو پر بپھرے شیروں کی طرح سے ہم جھپٹتے ہیں
پلٹتے ہیں جھپٹتے ہیں جھپٹ کر پھر پلٹتے ہیں

عدو پر بپھرے شیروں کی طرح سے ہم جھپٹتے ہیں
پلٹتے ہیں جھپٹتے ہیں جھپٹ کر پھر پلٹتے ہیں
پلٹتے ہیں جھپٹتے ہیں جھپٹ کر پھر پلٹتے ہیں

کہیں بھی ظلم کی تلوار سے ہرگز نہیں ڈرتے
کسی طاغوت کی چوکھٹ پہ اپنے سرنہیں جھکتے

کہیں بھی ظلم کی تلوار سے ہرگز نہیں ڈرتے
کسی طاغوت کی چوکھٹ پہ اپنے سرنہیں جھکتے